سائمہ(چرنے والے جانوروں ) کی زکوٰۃ کا بیان

۱. جو جانور سال کا اکثر حصہ مباح چرائی پر یعنی جس چرئی میں مالک کو کچھ دینا نہ پڑے اکتفا کرے وہ شرعاً سائمہ ( چرانے والے جانور) کہلاتے ہیں پس سائمہ وہ جانور ہے جو دودھ حاصل کرنے یا بچے ( نسل) لینے کے لئے یا موٹے ہو کر بیش قیمت ہو جانے کے لئے جنگلوں میں چرائے جاتے ہیں ایسے جانوروں میں خواہ وہ نر ہوں یا مادہ یا ملے جلے ہوں زکوٰۃ واجب ہے جب کہ وہ بقدر نصاب ہوں جو جانور پالتو اور جنگلی جانور کے ملنے سے پیدا ہوا ہو اگراس کی ماں پالتو ہے تو اس کا بھی یہی حکم ہے یعنی اس بارے میں ماں کا اعتبار کیا جائے گا یا اگر ماں پالتو ہے تو بچہ بھی پالتو ہے اور ماں جنگلی ہے تو بچھ بھی جنگلی سمجہا جائے گا پس بکری اور ہرن سے کوئی جانور پیدا ہو تو وہ بکری کی حکم میں ہے اور نیل گاو اور گائے سے پیدا ہو تو وہ گائے کے حکم میں ہے
۲. اگر وہ جانور گوشت کھانے یا لادنے یا سواری کے لئے ہوں اور دودھ کے لئے یا نسل بڑھانے کے لئے نہ ہو تو ان میں زکوٰۃ نہیں ہے اور اگر جانور تجارت کے لئے ہو تو ان میں تجارتی مال کی طرح قیمت کے حساب سے چالیسواں حصہ زکوٰۃ دی جائے گی
۳. سال کا نصف سے زیادہ حصہ جنگل میں چرانے سے وہ جانور سائمہ ہو جائیں گے نصف سال یا اس سے کم حصہ چرانے سے سائمہ نہیں ہوں گے اور ان میں زکوٰۃ واجب نہیں ہو گی
۴. اگر تجارتی جانوروں کو سائمہ بنانے کی نیت سے جنگل میں چرنے کی نیتسے چھوڑ دیا تو نیت سے چرنے کے لئے چھوڑنے کے وقت سے سال شروع ہو گا اور تجارتی مال کا سال ختم ہو جائے گا اسی طرح سائمہ جانوروں کو سال کے درمیان میں تجارت کی نیت سے بیچ دیا جائے تو