من استحل معصیۃ قد ثبتت حرمتہا بدلیل قطعی فہو کافر (ولا نزیل عنہ اسم الایمان) ای ولا نسقط عن المسلم بسبب ارتکاب کبیرۃ وصف الایمان، کما یقولہ المعتزلۃ حیث ذہبوا الی ان مرتکب الکبیرۃ یخرج عن الایمان ولا یدخل فی الکفر… ومن المعلوم ان السب دون القتل نعم لو استحل السب اوالقتل فہو کافر لا محالۃ وعلی تقدیر ثبوت الحدیث فیجب ان یؤول کما اول حدیث ’’ من ترک صلاۃ متعمداً فقد کفر‘‘ والحاصل ان الفسق والعصیان لایزیل الایمان فیصیر کافر اولاواسطۃ ۔
(شرح فقہ الاکبر للقاری ص۷۱ ،۷۲ الکبیرۃ لا تخرج المومن عن الایمان)
الجواب: (۱) لا یکلف اللہ نفسا الا وسعہا{۱} آپ پر نصیحت اور کوشش کرنے کے بعد گناہ نہیں۔ (۲) ضروری ہے{۲}۔ وھوالموفق
دین اور اسلام سے بالکل ناواقف آدمی کی نماز کا حکم
سوال: کیا فرماتے ہیں علماء دین اس مسئلہ کے بارے میں کہ ایک شخص جو اپنے آپ کو مسلمان کہتا ہے لیکن یہ نہیں جانتا ہے کہ پیغمبر علیہ السلام کس کو کہتے ہیں حضورﷺ کا کیا نام ہے اور قرآن مجید آسمانی کتاب ہے اور حضورﷺ پر نازل ہوئی ہے جب ایک شخص ان تمام احکام سے ناواقف ہو تو کیا اس کیلئے نماز پڑھنا درست ہے ؟ بینواتوجروا
المستفتی: نامعلوم…۱۹۷۴ء/۴/۳
الجواب: ایسے برائے نام مسلمانوں کے ساتھ محنت اور مشقت ازحد ضروری ہے{۳}۔ وھوالموفق
{۱}قال العلامہ جلال الدین السیوطی: ولما نزلت الایۃ التی قبلہاشکا المؤمنون من الوسوسۃ وشق علیہم المحاسبۃ بہا فنزل لا یکلف اللہ نفسا الا وسعہا ای ماتسعہ قدرتہا لہا ماکسبت من الخیر ای ثوابہ وعلیہا ما اکتبست من الشر ای وزرہ ولا یؤاخذ احد بذنب احد ولا بمالم یکسبہ مما وسوست بہ نفسہ۔
(تفسیر جلالین ص۴۵ جلد۱ سورۃ البقرۃ پارہ:۳ رکوع:۸ آیت:۲۸۶)
{۲} قال العلامہ سید احمد الطحطاوی: (والاوقات اسباب ظاہراً تسیراً) اعلم ان الاوقات لہا جہات مختلفۃ بالحیثیات فمن حیث ان الصلاۃ لاتجوز قبلہا وانما تجب بہا اسباب ومن حیث ان الاداء لا یصح بعدہا لاشتراط الوقت لہ وانما تکون قضاء الخ۔
(الطحطاوی علی المراقی الفلاح ص۹۳ کتاب الصلاۃ)
{۳} قال العلامۃ الشامی: من فرائض الاسلام تعلم ما یحتاج الیہ العبد فی اقامۃ دینہ واخلاص عملہ للہ تعالیٰ ومعاشرۃ عبادہ وفرض علی کل مکلف ومکلفۃ بعد تعلمہ علم الدین والہدایۃ تعلم علم الوضوء والغسل والصلاۃ والصوم الخ۔
(ردالمحتار مقدمہ ص۳۱ جلد۱ قبیل مطلب فی فرض الکفایۃ والعین)
وقال الملا علی قاری: (قولہ بلغوا عنی ولو آیۃ) ای انقلوا الی…(بقیہ حاشیہ اگلے صفحہ پر)
ملازمت کی وجہ سے مطلق نماز یا نماز باجماعت ترک کرنا
سوال: کیا فرماتے ہیں علماء دین شرع متین مسائل ذیل کے بارے میں کہ