٥ بخلاف البھیمة ومادون الفرج لا السببےة ناقصتہ (٣٥ ) و الحیض ) ١ لقولہ تعالی حتی یطّھرن بالتشدید۔

ترجمہ: ٥بخلا ف جانور اور فرج کے علاوہ میں حشفہ غائب ہو جائے تو غسل واجب نہیں ہو گا سبب کے ناقص ہو نے کی وجہ سے ۔
تشریح: چوپائے کی شرمگاہ میں حشفہ غائب کردیا اور منی نہیں نکلی تو غسل واجب نہیں ہوگا ،اسی طرح شرمگاہ اور دبر کے علاوہ میں حشفہ غائب کیا اور منی نہیں نکلی تو غسل واجب نہیں ہو گا ۔
وجہ : (١) اسکی ایک وجہ تو مصنف نے بیان کی ہے کہ وہاں لذت کاملہ نہیں ہے کیونکہ چوپاے سے جماع کرنے میں نفرت ہو تی ہے اور شرمگاہ اور دبر کے علاوہ میں اتنی لذت نہیں ہو تی اسلئے انزال ہوئے بغیر غسل واجب نہیں ہو گا ۔(٢) حدیث میں ہے کہ دوسرے مقامات پر جب تک انزال نہ ہو غسل واجب نہیں ۔عن عائشة قالت سئل النبی ۖ عن الرجل یجدالبلل و لا یذکر احتلاما ً ؟ قال:یغتسل ،و عن الرجل یری انہ قد احتلم و لم یجد بللاً ؟ قال لا غسل علیہ ۔(ترمذی شریف ،باب ماجاء فیمن یستیقظ و یری بللاًو لا یذکر احتلاما ،ص ٣١ نمبر ١١٣ ) اس حدیث میں ہے کہ منی نکلنے کا شک ہو لیکن نکلی نہ ہو توغسل واجب نہیں ۔
لغت : التقاء : لقی سے مشتق ہے ۔ملنا ،مس کرنا ۔ختانین : ختنہ کا تثنیة ہے ۔ختنہ کرنے کی جگہ ،یہاں مراد ہے عضو تناسل کا وہ حصہ جہاں ختنہ کیا جاتا ہے ۔جسکو عربی میں حشفہ کہتے ہیں ۔اور عورت کی شرمگاہ میں وہ جگہ جہاں اھل عرب ختنہ کرتے تھے ،جسکو عربی میں فرج داخل کہتے ہیں ۔حشفہ : عضو تناسل کا وہ حصہ جس پر ختنہ کرتے ہیں ۔انزل : نزل سے مشتق ہے ، اترنا ،یہاں مراد ہے منی کا نکلنا ۔ایلاج : داخل کرنا ۔الدبر : پیخانہ کرنے کے راستے کو دبر کہتے ہیں ۔مفعول بہ : جسکے ساتھ لواطت کی اسکو مفعول بہ کہتے ہیں ۔بھیمة : چوپایہ ،جانور ۔فرج : عورت کی شرمگاہ کو فرج کہتے ہیں اور بعض مرتبہ مرد کے عضو تناسل کو بھی فرج کہہ دیتے ہیں۔یہاں عورت کی شرمگاہ مراد ہے ۔اور دبر بھی مراد ہو سکتا ہے ۔
ترجمہ: (٣٥) حیض : سے غسل واجب ہو گا ١ اللہ تعالی کا قول حتی یطّھرن ،تشدید کے ساتھ پڑھیں۔
ترجمہ: ١ آیت میں ہے کہ حائضہ خوب پاک ہو جائے تب اس سے وطی کرو اور خوب پاک غسل سے ہوگی۔ یسئلونک عن المحیض قل ہو اذی فاعتزلوا النساء فی المحیض ولا تقربوھن حتی یطھرن فاذا تطھرن فاتوھن من حیث امرکم اللہ (آیت ٢٢٢ ،سورة البقرة٢)آیت میں اشارہ ہے کہ حائضہ غسل کرے تب جماع کرو۔(٢) حدیث میں ہے۔ عن عائشة ان امرأة سألت النبی ۖ عن غسلھا من المحیض؟ فامرھا کیف تغتسل قال خذی فرصة من مسک فتطھری بھا الخ (بخاری شریف، باب دلک المرأة نفسھا اذا تطھرت من المحیض ص٤٥ نمبر ٣١٤ مسلم شریف، باب