چھٹی روایت:
حضرت سہل بن صالح ہمدانی فرماتے ہیں : میں نے حضرت ابو جعفر محمد بن علی (امام محمد باقر ؒ) سے پوچھا : رسول اللہ ﷑کو تمام انبیاء سے پہلے ہونے کا درجہ کیسے حاصل ہو گیا ؟حالانکہ آپ﷑سب سے آخر میں تشریف لائے ہیں۔انہوں نے جواب دیا: اللہ تعالیٰ نے (تمام روحوں کو عالم ارواح میں عہد لیتے وقت) حضرت آدم ﷤کی پشت سے نکالا اور ان سے یہ اقرار لیا : ’’کیا میں تمہارا رب نہیں ہوں؟‘‘ تو جواب میں سب سے پہلے آنحضرت ﷑ نے ’’بلیٰ‘‘ (کیوں نہیں؟ آپ ہی ہمارے رب ہیں)کہا تھا۔ اسی لیے آپ﷑کو تمام انبیاءعلیہم السلام سے اول ہونے کا درجہ حاصل ہے۔ اگر چہ آپ﷑سب سے آخر میں تشریف لائے ہیں۔(إمالی أبی سهل قطان عن سهل بن صالح الهمدانی)
فائدہ: اگرچہ عہد لیتے وقت روح کو جسم کی شکل دیدی گئی ہو تو بھی روح ہی کے احکام غالب رہیں گے۔ اس لیے اس روایت کونور والی روایات میں ذکر کرنا مناسب سمجھا۔ اوپر حضرت شعبی ؒکی روایت میں مذکور ہے کہ حضرت آدم ﷤سے پہلے آپ ﷑سے عہد لیا گیا اور اس روایت سے معلوم ہوتا ہے کہ حضرت آدم ﷤کی