اللہ کی رحمت دل میں کیسے آتی ہے۔
مردو زن کی ایک دوسرے کے ساتھ مشابہت پر وعید:
اس کے بعد ایک اور معاملہ جو اس سے بھی زیادہ خطرناک اللہ خیر ہی رکھے وہ کیا ہے؟ ’’مشابہت‘‘ عورتوں اور مردوں کی ایک دوسرے کے ساتھ مشابہت۔
حضرت عبداللہ بن عباسh سے روایت ہے کہ آپﷺ نے لعنت فرمائی ہے اُن مردوں پر جو عورتوں سے مشابہت اختیار کرتے ہیں، اور اُن عورتوں پر جو مردوں سے مشابہت اختیار کرتی ہیں۔ (بخاری جلد2صفحہ874)
اور اس معاملہ میں آج میں کیا تفصیلات بیان کروں۔ کتنی ہی عورتیں ایسی ہیں جو مردوں کے لباس میں ہیں اور کتنے ہی مرد ایسے ہیں کہ بال بڑے بڑے کرلیتے ہیں، پونیاں بنالیں اور کھلے عام بازاروں میں جاتے ہیں اتنا دل دکھتا ہے۔ اللہ کی قسم! دل تکلیف میں چلا جاتا ہے اُن کو دیکھ کر کہ یا اللہ! ان کا کیا بنے گا؟ ان کے لیے دعائیں ہی کرسکتے ہیں کہ خود اپنے لیے لعنتوں کے مستحق ہورہے ہیں۔
موجودہ تعلیم اور نبوی تعلیم:
اور آج ہمارا میڈیا، ہماری تعلیم ہمیں کیا سکھاتی ہے کہ عورت اور مرد مل کر ایک دوسرے کے شانہ بشانہ کام کریں۔ نبیd نے کیا بتایا کہ مرد کی ذمہ داری ہے کہ گھر کے باہر کی ڈیوٹی نبھانی ہے اور عورت کی ذمہ داری ہے کہ گھر کے اندر کی ڈیوٹی کو نبھائے اور بچوں کی شریعت اور سنت کے مطابق تربیت کرے۔
عورتوں کے لیے دینی تعلیم کی ضرورت:
عورت بچوں کی تربیت شریعت وسنت کے مطابق تب ہی کرے گی جب اس کو دین