ہے۔ اور مرد اور عورت کی پیشاب گاہ کی اوپری حصے کے جو بال ہیں ان کو اُتارنا بھی ضروری ہے۔ (فتح الباری جلد10صفحہ344)
قینچی سے بال وغیرہ کاٹ سکتے ہیں۔ (فتح الباری جلد10صفحہ243)
لیکن جو سنت کا ثواب ہے وہ استرے سے ملے گا، حلق کرنے سے ملے گا۔
(مرقاۃ جلد4صفحہ457)
زیر ناف بال دور کرنے کا طریقہ:
زیر ناف بال دور کرنے کا طریقہ یہ ہے کہ بال صاف کرنے کی ابتدا اوپر سے کرے اور کوشش یہ کرے۔ یعنی حدود اربعہ صفائی کا یہ ہو کہ پیشاب گاہ اور پاخانہ گاہ کے اردگرد جہاں تک ممکن ہے زیادہ صفائی کرے، تھوڑے سے زیادہ بھی کٹ جائیں گے تو کوئی حرج نہیں۔
شریعت مطہّرہ کا پاکیزہ حکم:
اب شریعت کا حکم دیکھیں! شریعت کتنی پیاری ہے، کتنی خوبصورت ہے کہ یہ جگہ انسان کے ستر میں شامل ہوتی ہے۔ یہ انسان کسی کے سامنے کھول نہیں سکتا تو فرمایا گیا کہ دیکھو! یہ ستر والی جگہ ہے۔ لہذاجب تم ان کو بالوں کو کاٹ لو تو ان بالوں کو ایسی جگہ پر نہ ڈالو کے کسی دوسرے کی ان بالوں پر نظر پڑے۔ (نفع المفتی صفحہ116)
غور کرنے کی بات ہے کہ شریعت مطہّرہ نے ہمیں کتنی حیا کی تعلیم دی ہے۔ فرمایا کہ ایسے بال جن کو تم کاٹ کر پھینک چکے ہو چونکہ ایسی جگہ کے ہیں جس کا نظر آنا اور دکھانا گناہ ہے تو وہاں کے بال بھی تم نہ دکھاؤ۔ اور آج تو سب کچھ دکھانے کے لیے تیار ہوجاتے ہیں بال کی کیا بات رہی؟