۱۔ تانیث بالتاء ۔ ۲۔ مؤنث معنوی۔ ۳۔ عجمہ۔ ۴۔ ترکیب۔ ۵۔ الف نون زائدتان۔
قاعدہ (۴): غیر منصرف کے دو سببوں میں علمیت شرط تو نہیں ہے مگر ان کے ساتھ جمع ہو سکتی ہے۔ وہ یہ ہیں: ۱۔ عدل۔ ۲۔ وزنِ فعل۔
قاعدہ (۵): غیر منصرف کے جن پانچ اسباب میں علمیت شرط ہے اگر ان کو نکرہ بنا دیا جائے تو وہ منصرف2 ہوں گے۔ جیسے: رُبَّ فَاطِمَۃٍ / زَیْنَبٍ / إِبْرَاہِیْمٍ / مَعْدِ یْکَربٍ / عِمْرانٍ (بہت سی فاطمائیں الخ)
قاعدہ (۶): غیر منصرف کے جن دو سببوں میں علمیت شرط نہیں مگر جمع ہوتی ہے ان کو اگر نکرہ بنا دیا جائے تو وہ بھی منصرف3 ہو جائیں گے۔ جیسے: رُبَّ عُمَرٍ / أَحْمَدٍ (بہت سے عمر / بہت سے احمد) ۔
قاعدہ (۷): تانیث بالالف اور جمع منتہی الجموع دو سببوں کے قائم مقام ہیں۔
مشقی سوالات
۱۔ اسمِ معرب کی کتنی قسمیں ہیں؟
۲۔ منصرف کی تعریف مع مثال بیان کرو۔
۳۔ غیر منصرف کی تعریف بیان کرو۔
۴۔ غیر منصرف کے نو اسباب کیا ہیں؟
۵۔ عدل کی تعریف مع مثال بیان کرو۔
۶۔ عدل کی کتنی قسمیں ہیں؟