حرف ِ آغاز

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ وَکَفٰی وَسلَامٌ عَلٰی عِبَادِہِ الَّذِیْنَ اصْطَفٰی۔
اما بعد!
حضرت مولانا الحاج قاری مفتی سعید احمد صاحب ؒ سابق مفتی اعظم جامعہ مظاہر ِعلوم سہارن پور کا فضائلِ مسواک پر ایک مختصر رسالہ تصنیف فرمانے کا قصد تھا۔ جس میں مسواک کے فضائل واحکام، آداب وفوائد وغیرہ کا ذکر ہو، لیکن حضرت دامت برکاتہم کے کثیر مشاغل نے مہلت نہ دی، بارہا اس کی ضرورت کااظہار فرماتے رہنے کی وجہ سے حضرت دامت برکاتہم کے بڑے صاحب زادے جناب مولانا مفتی مظفر حسین زَادَتْ مَعَالِیْہ نائب ناظم مظاہرِ علوم سہارن پور مجازِ بیعت حضرت اقدس مولانا الشاہ محمد اسعد اللہ صاحب مُدَّ ظِلُّہٗ الْعَالِيْ خلیفۂ اجل حضرت اقدس تھانوی ؒ نے اپنی طالب علمی کے زمانے میں اس موضوع پر بہت سا عربی مواد نہایت تحقیق وتفتیش کے ساتھ جمع فرماکر حضرت دامت برکاتہم کی خدمت میں پیش فرمایا۔
ہونہار صاحب زادہ کی اس جلیل علمی کوشش پر حضرت موصوف نے داد وتحسین سے ہمت افزائی فرمائی۔ اور اس کی ترتیب وتبویب کا حکم فرمایا، لیکن صاحب زادہ موصوف اپنے دیگر علمی مشاغل کی وجہ سے تعمیلِ حکم میں تعجیل نہ فرما سکے۔اور حضرت موصوف دامت برکاتہم کا پیمانۂ حیات لبریز ہوگیا۔ اور ۱۳۷۷ھ میں آپ کی روح رفیقِ اعلیٰ سے جا ملی۔ إِنَّا لِلّٰہِ وَإِنَّا إِلَیْہِ رَاجِعُوْنَ۔
ایک عرصہ کے بعد صاحب زادہ موصوف نے مولانا اطہر حسین صاحب استاذ مظاہرِ علوم سہارن پور کو اس عربی مواد کی ترتیب وتبویب اور اُردو ترجمہ کرنے کا حکم فرمایا، تاکہ عوام وخواص یکساں طورپر اس سے مستفید ومتمتع ہوسکیں، چناںچہ ترتیب وتبویب اور ترجمہ نیز بعض اضافات کے بعد کتب خانہ سعیدیہ سے یہ رسالہ متعدد بار شائع ہوا، گجراتی تلگو وغیرہ زبان میں بھی اس کی مختلف اشاعتیں ہوئیں اور بحمداللہ رسالہ مقبول ثابت ہوا۔ اَب چھٹی بار جدید و قدیم اور اہم اضافات کے ساتھ شائع کیا جارہا ہے۔ مختلف مضامین وعنوانات اور غیر معمولی اضافات کی بنا پر رسالہ کی حیثیت بڑھ گئی ہے، اور ضخامت میں بھی اضافہ ہوگیا ہے۔
ناظرین کرام کی خدمت میں عرض ہے کہ حضرت اقدس مفتی صاحب علیہ الرحمۃ کی ترقی ٔ درجات کے لیے دُعا فرمائی جائے۔ اور حضرت مؤلف ومصنف کو دعواتِ صالحہ میں فراموش نہ فرمایا جائے۔
ناشر