تمہید
بسم اللّٰہ الرحمن الرحیم
بعد الحمد والصلاۃ!
واضح ہو کہ ایک شخص نے اپنے ایک عزیز کو در بابِ اتباعِ شریعت ودرستی اعمال ووضع کے نصیحت کے طور پر لکھا تھا، خیالاتِ جدیدہ کے غلبے سے اس نصیحت میں کچھ شبہ ات واوہام اس عزیز کی طبیعت میں پیدا ہوئے، جس کی اطلاع اس شخص کو کی گئی، اس شخص نے اس کے جواب لکھے، چوں کہ ایسے شبہات اکثر لوگوں کو پیدا ہوتے ہیں، اس لیے فائدۂ عامہ کے واسطے مصلحت معلوم ہوا کہ وہ شبہات اور ان کے جوابات ایک جاجمع کر کے مجموعے کا نام ’’اصلاح الخیال‘‘ رکھ دیا جاوے۔ اور ایک زمانے میں ایک شخصِ کامل نے ایک خط نصیحت آمیز بعض معززین متبعِ خیالاتِ جدیدہ کو تحریر فرمایا تھا، جس کے بھیجنے کی نوبت نہیں آئی تھی، اس کی نقل بعض لوگوں کے پاس تھی، اس کے مضامین بھی اس مجموعے کے مناسب تھے، اس لیے اس کا بھی الحاق کر دینا آخر میں مناسب معلوم ہوا۔ فقط والسلام
العبد الضعیف
محمد اشرف علی عفی عنہ

تقریرِ شبہات

بسم اللّٰہ الرحمن الرحیم

تقریر شبہ اول: میرے خیال میں جس نگاہ سے شریعت اور اتباعِ شریعت کو ہندوستان میں علمائے دین دیکھتے ہیں وہ شرائطِ اسلام نہیں ہیں، زمانے کی رفتار نے اور اللہ کی مشیت نے ملک پر انگریزوں کو حکمران کردیا، جس وقت مسلمانوں کی اول سلطنت قائم ہوئی تھی اس وقت کی تواریخ نکال کر دیکھیے تو معلوم ہوگا کہ قبل از بعثت جو حالت مسلمانوں کی تھی اس