میں کہ: اگر نماز میں آیت سجدہ تلاوت کی لیکن سجدہ کرنا بھول گیا تو اس نماز اور سجدۂ تلاوت کا کیا حکم ہے؟ قرآن و حدیث کی روشنی میں تسلی بخش جواب سے نوازیں۔
باسمہٖٖ سبحانہ و تعالیٰ
الجواب وباللّٰہ التوفیق: جو آیت سجدہ نماز میں تلاوت کی جائے پھر بر وقت سجدہ نہیں کیا تو اگر سلام پھیرنے سے پہلے پہلے یاد آجائے تو سجدہ تلاوت ادا کرلے پھر سجدہ سہو کرکے سلام پھیر دے، اور اگر بالکل بھول گیا اور نماز سے فراغت کے بعد یاد آیا تو نماز درست ہو گئی اور یہ سجدہ تلاوت نماز کے بعد نہیں کیا جائے گابس توبہ و استغفار کافی ہے۔
أما لو سہواً و تذکرہا ولو بعد السلام قبل أن یفعل منافیا یأتی بہا ویسجد للسہو… وإذا لم یسجد أثم فتلزمہ التوبۃ… وقال فی شرح المنیۃ وکل سجدۃ وجبت فی الصلاۃ ولم تؤد فیہا سقطت أی لم یبق السجود لہا مشروعا لفوات محلہ۔ (در مختار مع الشامی ۲؍۵۸۵زکریا )
وفی الذخیرۃ: صلی و سلم ثم تذکر أن علیہ سجدۃ تلاوۃ فعلیہ أن یعود و یسجد، وفی القدوری: کل سجدۃ وجبت علیہ فی الصلاۃ بتلاوۃ ثم خرج قبل أن یسجد سقطت عنہ۔ (الفتاویٰ التاتارخانیہ ۲؍۴۶۸رقم ۳۰۲۴ زکریا) فقط واللہ تعالیٰ اعلم
املاہ: احقر محمد سلمان منصورپوری غفرلہ۱۲؍۲؍۱۴۳۴ھ
الجواب صحیح: شبیر احمد عفا اللہ عنہ
کیسٹ پر آیتِ سجدہ سننا؟
سوال(۱۲۴۷):- کیا فرماتے ہیں علماء دین ومفتیانِ شرع متین مسئلہ ذیل کے بارے میں کہ: کیسٹ میں آیات سجدہ ہیں، اگر کیسٹ کے ذریعہ آیاتِ سجدہ سنیں تو سجدہ کرنا واجب ہے یا نہیں؟
باسمہٖٖ سبحانہ تعالیٰ
الجواب وباللّٰہ التوفیق: کیسٹ سے آیتِ سجدہ سننے سے سجدۂ تلاوت واجب نہیں ہوتا؛ کیوںکہ سجدہ کے وجوب کے لئے قاری یعنی تلاوت کرنے والے میں وجوبِ سجدہ کی