قنوتِ نازلہ پڑھنے کا طریقہ
مسئلہ(۵۲): قنوتِ نازلہ پڑھنے کا طریقہ یہ ہے کہ نمازِ فجر کی دوسری رکعت میں رکوع کے بعد ’’سمع اللہ لمن حمدہ‘‘ کہہ کر امام کھڑا ہوجائے، اور قیام کی حالت میں آوازِ قرأت سے کم تر آواز سے دعاء قنوت پڑھے، اور مقتدی اس کی دعا پر آہستہ آواز سے آمین کہتے رہیں، پھر دعاء قنوت سے فارغ ہوکر امام ’’اللہ اکبر‘‘ کہتے ہوئے سجدے میں چلا جائے، مقتدی بھی اس کی پیروی کریں، اور معمول کے مطابق نماز پوری کرلی جائے۔(۱)
قنوتِ نازلہ کے دوران ہاتھوں کی کیا کیفیت ہو؟ اس بارے میں تفصیل یہ ہے کہ اس حالت میں احتمالاً تین طرح کی صورتیں اپنائی جاسکتی ہیں:
(۱) ناف کے نیچے ہاتھوں کو باندھا جائے، جیسا کہ عام طور سے قیامِ نماز میں باندھے جاتے ہیں۔
(۲) دونوں ہاتھ نیچے کی طرف لٹکائے جائیں۔
(۳) دعا مانگنے کے انداز میں ہاتھ اوپر اٹھا لیے جائیں۔
اِن تین صورتوں میں پہلی دو صورتیں درست ہیں، لیکن ان میں سے دوسری صورت یعنی دونوں ہاتھوں کو لٹکائے رکھنا بہتر ہے، جب کہ تیسری صورت یعنی دعا کی طرح ہاتھوں کو اٹھانا مناسب نہیں ہے، جیسا کہ حکیم الامت حضرت مولانا اشرف علی صاحب تھانوی رحمۃ اللہ علیہ نے اپنی کتاب ’’ بوادر النوادر‘‘ میں لکھا ہے: ’’ مسئلہ مُجْتَہَدْ فیہ ہے، دلائل سے دو طرف (یعنی پہلی دو صورتوں کی طرف)