صلوۃ کی اہمیت :
نماز کی جو اہمیت اور عظمت ہے اُسے الفاظ میں بیان کرنا مشکل ہے تاہم چند امور ذکر کیے جارہے ہیں جن سے نماز کی اہمیت کا کسی قدر علم ہوسکتا ہے :
(1)ایمان کے بعد سب سے بڑا اور اہم فرض ہے ۔
(2)نماز اِسلام کے پانچ بنیادی ارکان میں سے ہے۔
(3)اِس کے ترک کرنے والے کو حدیث میں کفر کی طرف منسوب کیا گیا ہے۔
(4)حدیث کے مطابق نماز اِسلام کا ستون ہے ۔
(5)قیامت میں سب سے پہلے نماز کا سوال کیا جائے گا۔
(6)نبی کریمﷺکی آخری وصیت دنیا سے جاتے ہوئے نماز کی تھی ۔
تارکِ صلوۃ کا حکم :
ترکِ صلوۃ کی دو صورتیں ہیں :(1)انکار کے ساتھ ۔(2)سستی کی وجہ سے ۔
پہلی صورت کفر کی ہے ، اِس لئے کہ نماز قرآن و حدیث کے دلائلِ قطعیہ سے ثابت ہے اور اُس کا اِنکار کرنے والا بغیر کسی شک و شبہ کے کافر ہے ۔
دوسری صورت میں اِختلاف ہے :
امام احمد بن حنبل﷫:کافر ہے ۔اُسے تین دن تک قید میں ڈالاجائے گا اور نماز کی تلقین کی جائےگی ، اگر پڑھ لے تو ٹھیک ورنہ باعتبار کافر ہونے کے قتل کردیا جائے گا۔