روزہ میں ڈکار
مسئلہ(۹۲): اگر رمضان المبارک میں کسی روزہ دار کو صبح صادق کے بعد ڈکاریں آتی ہوں، اور اس کے ساتھ پانی بھی آتا ہو ، تو پانی کو تھوک دیا کرے، اس سے روزہ فاسد نہیں ہوتا ہے ۔(۱)
------------------------------
=(۴/۱۸۲ ، کتاب الصوم ، إذا نوی بالنہار صوماً)
ما في’’ بدائع الصنائع ‘‘: ولأن زمان رمضان وقت شریف فیجب تعظیم ہذا الوقت بالقدر الممکن ، فإذا عجز عن تعظیمہ بتحقیق الصوم فیہ یجب تعظیمہ بالتشبہ بالصائمین قضائً لحقہ بالقدر الممکن إذا کان أہلاً للتشبہ ونفیاً لتعریض نفسہ للتہمۃ ۔
(۲/۲۶۲ ، کتاب الصوم ، حکم الصوم الموقت إذا فات عن وقتہ)
ما في ’’ الموسوعۃ الفقہیۃ ‘‘ : فکل ما کان من أعلام دین اللہ وطاعتہ تعالی فہو من شعائر اللہ فالصلوٰۃ والصوم والزکوٰۃ والحج ۔۔۔۔ من شعائر اللہ ، یجب علی المسلمین إقامۃ شعائر الإسلام الظاہرۃ ، وإظہارہا فرضاً کانت الشعیرۃ أم غیر فرض ۔۔۔۔۔ لأن ترک شعائر اللہ یدل علی التہاون في طاعۃ اللہ وإتباع أوامرہ ۔ (۲۶/۹۷ ، ۹۸ ، شعائر)
ما في ’’ حاشیۃ الطحطاوي ‘‘ : وقیل یستحب الإمساک بقیۃ الیوم علی من فسد صومہ ولو بعذر ۔۔۔۔۔ لحرمۃ الوقت ، أي تشبہاً لقضاء حق الوقت ۔
(ص/۶۷۸ ، کتاب الصوم ، فصل یجب الإمساک)
ما في ’’ رد المحتار ‘‘ : ما کان سبباً لمحظور فہو محظور ۔ (۵/۲۲۳ ، مکتبہ نعمانیہ)
ما في ’’ بدائع الصنائع ‘‘ : ما أدی إلی الحرام فہو حرام ۔ (۱/۶۶۸ ، بیروت)
الحجۃ علی ما قلنا :
(۱) ما في ’’ تنویر الأبصار مع الدر المختار‘‘ : وإن ذرعہ القيء وخرج لا یفطر مطلقاً ، فإن عاد بلا صنعہ ولو ہو ملء الفم مع تذکر للصوم لا یفسد ، خلافاً للثاني ، وإن أعادہ أفطر إجماعاً إن ملأ الفم وإلا لا ۔۔۔۔۔۔۔۔ وہذا کلہ في قيء طعام أو ماء أو مرۃ أو دم ۔
(۳/۳۵۱ ، مطلب في الکفارۃ)=