۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
------------------------------
=(۱) ما في ’’ صحیح البخاري ‘‘ : عن عبد اللہ بن عباس ، عن أبي طلحۃ رضي اللہ تعالی عنہم قال : قال النبي ﷺ : ’’ لا تدخل الملائکۃ بیتاً فیہ کلب ولا تصاویر ‘‘ ۔
(ص/۱۰۷۲ ، کتاب اللباس ، باب التصاویر ، رقم الحدیث : ۵۹۴۹ ، بیروت)
ما في ’’ تکملۃ فتح الملہم ‘‘ : أما التلفزیون والفیدیو ، فلا شک في حرمۃ استعمالہما بالنظر إلی ما یشتملان علیہ من المنکرات الکثیرۃ ، من الخلاعۃ والمجون ، والکشف عن النساء المتبرجات أو العاریات ، وما إلی ذلک من أسباب الفسوق ۔ (۱۰/۱۴۲ ، کتاب اللباس والزینۃ ، باب تحریم تصویر صورۃ الحیوان ، دار احیاء التراث العربي)
ما في ’’ الدر المختار مع الشامیۃ ‘‘ : وفیہ ’’ مجتبیٰ ‘‘ النظر إلی ملاء ۃ الأجنبیۃ بشہوۃ حرام ۔
(۹/۴۵۳ ، کتاب الحظر والإباحۃ ، فصل في النظر والمس)
ما في ’’ بدائع الصنائع ‘‘ : الوسیلۃ إلی الحرام حرام ، أصلہ الخلوۃ ۔
(۶/۴۸۸ ، کتاب الاستحسان ، دارالکتب العلمیۃ بیروت)
(۲) ما في’’ صحیح البخاري ‘‘ : عن أبي ہریرۃ قال : قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم : ’’ من لم یدع قول الزور والعمل بہ، فلیس للہ حاجۃ في أن یدع طعامہ وشرابہ ‘‘ ۔
(ص/۳۳۵ ، کتاب الصوم ، باب من لم یدع ۔ الخ ، رقم الحدیث : ۱۹۰۳ ، بیروت)
ما في ’’ سنن أبي داود ‘‘ : عن أبي ہریرۃ أن النبي ﷺ قال : ’’ إذا کان أحدکم صائماً فلا یرفث ولا یجہل ، فإن امرؤٌ قاتَلہ أوشاتَمہ فلیقل : إني صائمٌ ‘‘ ۔ (۱/۳۲۳ ، الغیبۃ للصائم)
ما في ’’ بذل المجہود ‘‘ : وقال الطیبي : الزور الکذب والبہتان ، أي من لم یترک القول الباطل من قول الکفر ، وشہادۃ الزور ، والإفتراء ، والغیبۃ ، والبہتان ، والقذف والسب ، والشتم ، واللعن ، وأمثالہا مما یجب علی الإنسان اجتنابہا ، ویحرم علیہ إرتکابہا ۔
(۸/۵۰۵ ، کتاب الصیام ، الغیبۃ للصائم)
(آپ کے مسائل اور ان کا حل :۳/۳۲۲، قدیمی)