شوہریا باپ کا اپنی بیوی یا بیٹی کے بال کاٹنا
مسئلہ(۱۰۵): احرام کھولنے کے لیے شوہر اپنی بیوی کے اور باپ اپنی بیٹی کے بال کاٹ سکتا ہے، عورتیں یہ کام خود بھی کرسکتی ہیں۔(۱)
 ------------------------------
الحجۃ علی ما قلنا :
(۱) ما في ’’ الموسوعۃ الفقہیۃ ‘‘ : أباح الفقہاء نظر الرجل إلی موضع الزینۃ من المحرم لقولہ تعالی : {ولا یبدین زینتہنّ إلا لبعولتہنّ أو آبائہن أو آباء بعولتہنّ} ۔۔۔ أما حدود الزینۃ التي یحل النظر إلیہا ولمسہا فقد ذہب الفقہاء إلی حرمۃ النظر إلی ما بین السرّۃ والرکبۃ للمحارم ، وما عدا ذلک اختلفوا فیہ علی أقوال ، وذہب الحنفیۃ إلی أنہ یجوز للرجل أن ینظر من محرمہ إلی الرأس والوجہ والصدر والساق والعضد ، إن أمن شہوتہ وشہوتہا أیضاً ۔
(۳۶/۲۰۲ ، محرم النظر إلی المحرم)
ما في ’’ الموسوعۃ الفقہ ‘‘ : ذہب الفقہاء إلی أن ما یجوز النظر إلیہ من المحرم یجوز مسہ ، إذا أمنت الشہوۃ ، لما روي : ’’ أن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کان إذا قدم من سفر قبّل ابنتہ فاطمۃ رضي اللہ تعالی عنہا ‘‘ ۔ (۳۶/۳۰۴ ، محرم ، مسّ ذوات المحارم)
ما في’’ الفتاوی الہندیۃ ‘‘ : ولا بأس للرجل أن ینظر من أمہ وابنتہ البالغۃ وأختہ ، وکل ذي رحم محرم منہ کالجدات والأولاد ، وأولاد الأولاد ، والعمّات والخالات إلی شعرہا وصدرہا وذوائبہا وثدیہا وعضدہا ۔۔۔۔۔۔۔ وما حلّ النظر إلیہ حل مسّہ ۔
(۵/۳۲۸ ، الباب الثامن فیما یحل للرجل النظر إلیہ وما یحل مسّہ وما لا یحل)
وما في ’’ الفتاوی الہندیۃ ‘‘ : أما النظر إلی زوجتہ ومملوکتہ فہو حلال من قرنہا إلی قدمہا ۔
(۵/۳۲۸ ، الباب الثامن فیما یحل للرجل النظر إلیہ وما یحل مسّہ الخ)
ما في ’’ الدر المختار مع الشامیۃ ‘‘ : (ینظر الرجل ۔۔۔۔۔۔ من محرمہ) ہي ما لا یحل لہ نکاحہا أبدًا ، بنسب أو سبب ولو بزنا (إلی الرأس والوجہ والصدر والساق والعضد) ۔
(۹/۴۴۷ ، کتاب الحظر والإباحۃ ، فصل في النظر والمسّ)
(آپ کے مسائل اور ان کا حل:۵/۳۸۳، جدید)