کورٹ میرج
مسئلہ(۱۰۹):عدالت میں دو آزاد عاقل ،بالغ، مسلمان گواہوں کی موجودگی میں اگر نکاح کرلیا جائے، تو یہ نکاح درست ہے، اور مرد وعورت ایک دوسرے کے لیے حلال ہیں، البتہ اس طرح چھپ چھپاکر کورٹ میرج نہ کرتے ہوئے علانیہ مستحب طریقہ پر نکاح کرنا چاہیے۔(۱)
------------------------------
= قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم :’’ أعلنوا ہذا النکاح واجعلوہ في المساجد ، واضربوا علیہ بالدفوف‘‘ ۔ (۳/۱۸۱ ، کتاب النکاح)
ما في ’’ البحر الرائق ‘‘ :وأشار المصنف بکونہ سنۃ أو واجباً إلی استحباب مباشرۃ عقد النکاح في المسجد لکونہ عبادۃ ، وصرحوا باستحبابہ یوم الجمعۃ ۔۔۔۔۔۔۔ وروی الترمذي عن عائشۃ قالت : قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم : ’’ أعلنوا ہذا النکاح واجعلوہ في المساجد ، واضربوا علیہا بالدفوف ‘‘ ۔ (۳/۱۴۳ ، کتاب النکاح) (فتاوی رحیمیہ :۸/۲۴۳، کراچی)
الحجۃ علی ما قلنا :
(۱) ما في ’’ سنن الدار قطني ‘‘ : عن عائشۃ رضي اللہ تعالی عنہا قالت : قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم : ’’ لا نکاح إلا بولي وشاہدي عدل ‘‘ ۔ (۳/۱۵۸ ، کتاب النکاح ، رقم الحدیث : ۲۲۶)
ما في ’’ جامع الترمذي ‘‘ : عن ابن عباس أن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم قال : ’’ البغایا اللاتي ینحکن أنفسہنّ بغیر بینۃ ‘‘ ۔ (۲/۱۸۴ ، کتاب النکاح ، باب ما جاء لا نکاح إلا ببینۃ ، رقم الحدیث : ۱۱۰۳)
ما في ’’ فتح القدیر لإبن الہمام ‘‘ : ولا ینعقد نکاح المسلمین إلا بحضور شاہدین حرّین عاقلین بالغین مسلمین رجلین ، أو رجل وامرأتین ۔ (۳/۱۹۰ ، کتاب النکاح)
ما في ’’ الدر المختار مع الشامیۃ ‘‘ : (و) شرط (حضور) شاہدین (حرین) أو حر وحرتین (مکلفین سامعین قولہما معاً) علی الأصح فاہمین أنہ نکاح علی المذہب ۔ بحر ۔ (مسلمین لنکاح مسلمۃ) ۔ (۴/۸۷ -۹۲، کتاب النکاح ، البحر الرائق :۳/۱۵۵ ، کتاب النکاح ، مجمع الأنہر :۱/۴۷۲ ، کتاب النکاح ، النہر الفائق :۲/۱۸۱ ، کتاب النکاح ، تبیین الحقائق : ۲/۴۵۲ ، کتاب النکاح)
ما في ’’ بدائع الصنائع ‘‘ : أما صفات الشاہد الذي ینعقد بہ النکاح ، وہي شرائط=