۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 ------------------------------
=ما في’’ الجامع لأحکام القرآن للقرطبي ‘‘ : أذیۃ المؤمنین والمؤمنات ہي أیضاً بالأفعال والأقوال القبیحۃ ۔۔۔۔۔ لأن أذاہ في الجملۃ حرام ۔ (۱۴/۲۴۰)
ما في ’’ الصحیح لمسلم ‘‘ : قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم : ’’ إن دمائکم وأموالکم حرام علیکم کحرمۃ یومکم ہذا ‘‘ ۔ (۵/۱۰۰ ، بیروت)
ما في ’’ صحیح البخاري ‘‘ : عن سعید بن زید قال : قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم : ’’ من أخذ شبرًا من الأرض ظلمًا ، فإنہ یُطوَّقُہ یوم القیامۃ من سبع أرضین ‘‘ ۔
(ص/۵۷۱ ، کتاب بدء الخلق ، باب ما جاء في سبع أرضین ، بیروت)
ما في ’’ فتح الباري شرح البخاري ‘‘ : قال الخطابي : قولہ : (طوقہ) لہ وجہان : أحدہا : أن معناہ أنہ یکلف نقل ما ظلم منہا في القیامۃ إلی المحشر ۔۔۔۔۔۔ الثاني : معناہ أنہ یعاقب بالخسف إلی سبعین أرضین ، أي فتکون کل أرض في تلک الحالۃ طوقاً في عنقہ ۔ انتہی ۔۔۔۔۔۔۔۔ وفي الحدیث تحریم الظلم والغصب ، وتغلیظ عقوبتہ ، وإمکان غصب الأرض ، وأنہ من الکبائر ، قالہ القرطبي ۔ (۵/۱۳۰)
ما في ’’ رد المحتار ‘‘ : لا یجوز التصرف في مال غیرہ بلا إذنہ ، ولا ولایتہ ۔
(۹/۲۴۰ ، کتاب الغصب ، مطلب فیما یجوز من التصرف بمال الغیر)
ما في ’’ الہدایۃ ‘‘ : وعلی الغاصب ردّ العین المغصوبۃ ، معناہ : ما دام قائماً ، لقولہ علیہ السلام : ۔۔۔۔ ’’ لا یحل لأحد أن یأخذ متاع أخیہ لاعباً ولا جاداً ، فإن أخذہ فلیردّ علیہ ‘‘ ۔
(۳/۳۷۳ ، کتاب الغصب ، کذا في مجمع الأنہر : ۴/۷۸ ، کتاب الغصب ، تبیین الحقائق : ۶/۳۱۵ ، کتاب الغصب)
(فتاوی محمودیہ :۱۷/۱۴۲،۱۴۳، کراچی، کفایت المفتی :۸/۱۷۵، جدید مسائل کا حل :ص/۳۰۰)