لے لے اور وہ مکان اس شخص کو دیدے، یا زمین کی قیمت شخصِ آخر کو دیدے، اس طرح یہ زمین اس کی ہوجائے گی، غرض کہ آپسی سمجھوتہ سے معاملہ حل کرلیا جائے۔(۳)
------------------------------
الحجۃ علی ما قلنا :
=(۱) ما في ’’ صحیح مسلم ‘‘ : عن أبي ہریرۃ رضي اللّٰہ تعالی عنہ قال : قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم : ’’ لا یأخذ أحد شبراً من الأرض بغیر حقہ إلا طوقہ اللّٰہ إلی سبع أرضین یوم القیامۃ ‘‘ ۔
(۲/۳۳ ، کتاب المساقات ، باب تحریم الظلم والغصب)
ما في ’’ التنویر مع الدر والرد ‘‘ : (ومن بنی أو غرس في أرض غیرہ بغیر إذنہ أمر بالقلع والرد) ۔۔۔۔۔۔ وللمالک أن یضمن لہ قیمۃ بناء أو شجر أمر بقلعہ إن نقصت الأرض بہ ۔
(۹/۲۳۴، کتاب الغصب ، قبیل مطلب زرع في أرض ۔ الخ)
(۲) ما في ’’ شرح المجلۃ ‘‘ : إن کان المغصوب أرضاً فبنی الغاصب فیہا بنائً ۔۔۔۔۔ أو غرس فیہا أشجارًا فإنہ یؤمر بقلعہا ورد الأرض ، وإن کانت قیمۃ البناء والغراس أکثر من قیمۃ الأرض ۔ (ص/۵۰۲ ، رقم المادۃ :۹۰۶)
(۳) ما في ’’ القرآن الکریم ‘‘ : {والصُّلح خیرٌ} ۔ (سورۃ النساء : ۱۲۸)
ما في ’’ حاشیۃ الشلبي علی تبیین الحقائق ‘‘ : {الصّلح خیر} ۔ [النساء :۱۲۸] عرف بالألف واللام فیقتضي أن یکون کل الصلح خیرًا وکل خیر مشروع ۔
(۵/۴۶۷ ، کتاب الصلح ، بیروت)
(فتاوی محمودیہ: ۱۷/۱۴۴،کراچی)