المستفتی: محمدتسلیم راعینی، بجنور
باسمہ سبحانہ تعالیٰ
الجواب وباللّٰہ التوفیق: دوران خطبہ یا خطبہ کے وقت امام صاحب کے سر پر دستار باندھنا سلف و خلف سے ثابت نہیں ؛ اس لئے اس کا ترک لازم ہے، متولی سے معلوم کیا جائے کہ یہ دستار فضیلت ہے یا دستار خلافت؟ کہ متولی صاحب سے حدیث پڑھ کر امام دستار فضیلت حاصل کر رہا ہے یا متولی صاحب کے ہاتھ پر بیعت ہو کر دستار خلافت حاصل کررہا ہے۔ فقط واﷲ سبحانہ وتعالیٰ اعلم
کتبہ: شبیر احمد قاسمی عفا الله عنہ
۲۹؍ شوال المکرم ۱۴۱۷ھ
(فتویٰ نمبر: الف۳۲ ؍۵۰۱۰)
الجواب صحیح:
احقر محمد سلمان منصورپوری غفر لہ
۲۹؍ ۱۰؍ ۱۴۱۷ھ
ناپاک پانی سے غسل کر کے جمعہ کا خطبہ دیا اور نماز پڑھادی

سوال ]۳۶۵۱[: کیا فرماتے ہیں علمائے دین ومفتیانِ شرع متین مسئلہ ذیل کے بارے میں: کہ ایک امام نے ناپاک پانی سے غسل کر کے جمعہ کا خطبہ دیا اور نماز پڑھائی، نماز سے فارغ ہونے کے بعد معلوم ہواکہ پانی ناپاک تھا، تو کیا نماز اور خطبہ دونوں ہی چیزیں دوبارہ ادا کی جائیں گی یا صرف نماز؟
نیز اگرخطبہ ناپاک پانی سے غسل کر کے پڑھ دیا، اس کے بعد معلوم ہوا کہ پانی ناپاک تھا، تو پھر غسل کر کے نماز ادا کی تو کیاخطبہ پھر سے پڑھنا پڑے گا؟
المستفتی: محمدشعیب فتح پوری، متعلم جامعہ قاسمیہ مدرسہ شاہی مرادآباد
باسمہ سبحانہ تعالیٰ
الجواب وباللّٰہ التوفیق: طہارت شروط صلاۃ میں سے ہے اور ماء نجس سے غسل عدم غسل کے حکم میں ہے؛ اس لئے نماز کا اعادہ واجب ہوگا۔ اور طہارت شرط خطبہ میں سے