پیش لفظ
بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
الحمد للّٰہ ربّ العالمین، والصلوٰۃ والسلام علیٰ أفصح العرب وعلیٰ اٰلہ وأصحابہ وأتباعہ الذین بذلوا جہودہم في سبیل حفظ القراٰن وعلومہ، وفي طریق إشاعۃ السنۃ النبویۃ وما یتعلق بہا من الفنون۔
امابعد! قرآن وحدیث اور ان کے متعلقہ علوم ایک بحرِ ناپیداکنار اور اتھاہ سمندر ہے، اس میں بے شمارصاحب بصیرت علما وفضلا نے غوطہ زنی کی؛ لیکن ہرایک نے یہی کہا: ’’ماعلمنا کما کان حقہ‘‘۔
اس کا کونسا پہلو ہے کہ جس کے متعلق دعویٰ کیاجاسکے کہ اب کشتی ساحل پر لگ گئی ہے، کسی بھی زاویہ کے متعلق تکمیل کا دعویٰ یقیناخلافِ حقیقت ثابت ہوگا۔ ان بے شمار اور مختلف النوع علوم میں بعض کی حیثیت کلیدی واساسی ہے، کہ ان کے بغیر چارۂ کار نہیں ، اور وہ ’’نحو وصرف‘‘ ہیں ۔ بحمداللہ یوم تدوین سے تاایں دم دیگر فنون کی طرح ان دونوں فنون میں بھی متقدمین ومتأخرین نے اس قدر خدمات انجام دی ہے کہ آگے کچھ سوچنا اور اس سلسلے میں قلم اٹھانا کبھی بے معنی سا معلوم ہونے لگتاہے؛مگر
ستاروں کے آگے جہاں اور بھی ہے
یہ ممکن ہے کام کرنے والے کے لیے کوئی خالی گوشہ نکل آئے۔
چناں چہ اس بے بضاعت نے عرب ممالک کی کتبِ نحو وصرف کا مطالعہ کیا، اور ان کے اسلوب کا جائزہ لیا تو معلوم ہوا کہ جس طرح ہمارے ملک میں