احرام میں مونچھ ترشوانا
محرم شخص اگر مونچھوں کو منڈوائے یا ترشوائے تو اس پر صدقہ واجب ہے، چاہے پوری مونچھوں کو ترشوائے یا بعض کو۔ ولو حلق شاربہ کلہ او بعضہ فعلیہ صدقۃ وہو المذہب الصحیح؛ لانہ بعض اللحیۃ ولا یبلغ ربع المجموع۔ (غنیۃ الناسک ۲۵۷، شامی زکریا ۳؍۵۸۰، البحر العمیق ۲؍۸۵۳)
زیر ناف بال مونڈنا
حالتِ احرام میں موئے زیر ناف، دونوں بغل یا گردن کے بال مونڈنے سے دم واجب ہے۔ وان حلق رقبتہ او عانتہ او نتف ابطیہ فعلیہ دم۔ (غنیۃ الناسک ۲۵۷، درمختار مع الشامی زکریا ۳؍۵۸۰، ہندیہ ۱؍۲۴۳، البحر الرائق زکریا ۳؍۱۷)
بال صفا کریم سے بال صاف کرنا
اگر کوئی شخص بال صفا کریم یا پاؤڈر سے بال صاف کرلے یا چمٹی سے اکھیڑ لے یا دانت سے توڑدے، تو ان سب صورتوں کا حکم مونڈنے کے ہی مانند ہے، پس جو جزاء مونڈنے اور قینچی سے کتروانے کی صورت میں ہے وہی جزاء یہاں بھی حسبِ تفصیل واجب ہوگی۔ والنتف والقص والاطلاء بالنورۃ والقلع بالاسنان والسقوط بالمس ونحو ذٰلک کالحلق۔ (غنیۃ الناسک ۲۵۷، ہندیہ ۱؍۲۴۴، البحر الرائق زکریا ۳؍۱۵)
ایک عضو سے جابجا بال مونڈے
اگر محرم شخص کسی عضو کے متفرق جگہوں سے بال منڈائے، مثلاً سر کے مختلف حصوں سے بال منڈائے تو ان کو یکجا کرکے دیکھا جائے گا، اگر کل کا مجموعہ چوتھائی سر کے برابر ہوجائے تو اس پر دم واجب ہوگا۔ ویجمع المتفرق فی الحلق کما فی الطیب فلو حلق ربع رأسہ من مواضع متفرقۃ فعلیہ دم۔ (غنیۃ الناسک ۲۵۷، شامی زکریا ۳؍۵۸۰)