دوسری حدیث میں ہے کہ قیامت کے دن اللہ تعالیٰ اس شخص کی طرف نظر بھی نہیں کرے گا جس نے اپنی عورت سے دبر کے مقام میں ہمبستری کی ہوگی۔ (مشکوۃ: ۲۷۶) اس جیسی بہت سی حدیثوں سے اس برے فعل کی ممانعت اور وعید ثابت ہے، اس لئے ہر مسلمان کو اس سے بچنا ضروری ہے، اس کے باوجود کوئی بد بخت یہ کام کرے گا تو اس سے اس کے نکاح میں کوئی فرق نہیں آئے گا۔ فقط و اللہ تعالی اعلم
{۱۸۲۳} نکاح کے بعد سلام و ملاقات کرنااور مبارکبادی دینا؟
سوال: نکاح کے بعد سلام وملاقات یا معانقہ کے ذریعہ مبارک بادی دینا کیا بدعت ہے؟ آج کل جو یہ کیا جاتا ہے اس میں افتراء علی الرسول کی کوئی صورت ہے؟
الجواب: حامداً و مصلیاً و مسلماً… نکاح کرنے والے کو بارک اللہ لک و علیک و جمع بینکما بالخیر کے الفاظ کے ساتھ دعا دینا اورمبارکباد کہنا یہ تو جائز ہے بلکہ حضور اقدس ﷺ سے بھی ثابت ہے اس لئے سنت کہا جائے گا لیکن ہمارے یہاں دولہا کھڑا ہو کر عقد نکاح کے بعد سلام کرتا ہے یا مصافحہ کرتا ہے معانقہ کرتا ہے یہ سب رسمی امور ہیں سنت سے اس کا کوئی تعلق نہیں ہے اور اگر کوئی اس کو شرعی احکام یا سنت سمجھ کر کرتا ہے تو بدعت و ناجائز اور قابل ترک ہے۔ فقط و اللہ تعالی اعلم
{۱۸۲۴} نکاح سے پہلے کا حمل کس کا کہلائے گا؟
سوال: ایک عورت نے اپنی ذات ایک شخص کو ہبہ کر دی، اور موہوب لہ سے اس عورت کو تین ماہ کا حمل بھی ہے، اور اب اس عورت نے تقریبًا آٹھ دن سے اس مرد سے نکاح کر لیا ہے، تو یہ بچہ حلال کہلائے گا یا حرام؟ مردو عورت کا کہنا