اصطلاحی تعریف : متن کی اصطلاحی تعریف یہ ہے کہ متن وہ کلام ہے جہاں سند کا سلسلہ ختم ہو جائے ۔
سند کی اہمیت و ضرورت :
سند یا اِسناد اس امت کی خصوصیت ہے جو دیگر امتوں میں نہیں پائی جاتی ، اسی بناپر ، دیگرامتوں کی آسمانی کتابیں ضائع اور محرف ہوگئیں ، جیساکہ ان کے انبیائے عظام کی صحیح خبریں ضائع و محرف ہو گئیں ، اور ان کی جگہ پر جھوٹے افراد کی کذب بیانی اور افترا پردازی آگئی جنہوں نے اللہ کی آیتوں کو چند کھوٹے سکوں کے عوض بیچ ڈالا ، خبروں کو نقل کرنے میں اسانید کے نقل کا اہتمام اس امت کی تاکیدی سنت رہی ہے جو ایک شعارِ اسلامی کا درجہ رکھتی ہے ، اسی لیے ایک مسلمان پر لازم ہے کہ نقل احادیث میں اس پر اعتماد کرے ، حضرت عبداللہ بن مبارک رحمۃ اللہ علیہ کا قول ہے : ’’ الإسناد من الدین ولولاالإسناد لقال من شاء ما شاء ‘‘ ( اصول تخریج الحدیث ص؍۱۵۸ ) اسناد دین کا ایک حصہ ہے ، اگر اسناد نہ ہوتی تو کوئی شخص بھی جو چاہتا کہہ ڈالتا ۔
اسی طرح سفیان ثوری رحمۃ اللہ علیہ کہتے ہیں : ’’ الإسناد سلاح المومن ‘‘ اسناد مومن کا ہتھیار ہے ، اسناد کی قدر و قیمت اس شخص کی نظر میں زیادہ آشکارا ہوتی ہے جو سند کے رجال کو جانتاہے جن سے ایک سند وجود میں آتی ہے ، جس کا طریقہ یہ ہے کہ کتبِ تراجمِ رجال میں رواۃ کے احوال کی چھان بین کی جائے ، اور دیکھا جائے کہ سند کے رجال کا کہاں اتصال ہے اور کہاں انقطاع اور یہ بات واضح ہے کہ اگر اسناد نہ ہوتی تو صحیح احادیث و اخبار کا احادیث موضوعہ سے امتیاز مشکل ہو جاتا اور ہر باطل پرست اور بدعتی کو اختلاف و انتشار کی جرأت ہو جاتی اور معاملہ وہی ہو جاتا جو عبداللہ بن مبارک رحمۃ اللہ علیہ