آخر میں ایک اور بات کی طرف توجہ دلاتاچلوںوہ یہ کہ اناؤنسر مقرر یا نعت خواں کودعوت دینے کے بعد کہتا ہے کہ ’’حضرت مولانا صاحب مائک پر ‘‘جبکہ مولانا صاحب ابھی اپنی جگہ پر ہی ہوتے ہیں یا کبھی مقررصاحب کرسی پر آکر بیٹھ بھی جاتے ہیں اور اناؤنسر کہہ رہاہوتا ہے کہ ’’حضرت تشریف لائیں ‘‘یا درہے کہ اگرہم نے کسی کو دعو ت دے کر اس کے لئے کوئی شعر کہنا شروع کیا تھا اور جتنی دیرمیں ہم نے شعر کہا وہ مائک پر آگئے تو اب یہ نہیں کہیں گے کہ ’’مصوف تشریف لائیں ‘‘بلکہ کہیں گے کہ ’’موصوف مائک ‘‘پر ہاںاگر ہمارے شعرکہنے یادعوت دینے تک وہ مائک پر نہیں پہنچ سکے ہیں؛ بلکہ ابھی اپنی جگہ سے اٹھنے کی کوشش میں ہیں تو اب کہیں گے کہ ’’موصوف تشریف لائیں اور اپنے مواعظ حسنہ یا نعتیہ کلام سے ہم سامعین کومحظوظ فرمائیں ‘‘
ہم جلسے کی نظامت کیسے کریں
ناظم جلسہ کو سب سے پہلے ایک تمہیدی تقریر کرنی ہوتی ہے جو کم سے کم دس منٹ کی ہو اس تقریر میں حمد وصلاۃ کے بعد اللہ تعالیٰ کا شکریہ ادا کیا جائے پھر اجلاس کے مقاصد بیان کئے جائیں ،پروگرام کا اجمالی خاکہ سامنے رکھا جائے ، منتظمین ،مہمان مقرر ین اور جلسہ سننے آئے ہوئے تمام حضرات کا پرزور لہجے میں استقبال کرتے ہو ئے شکریہ کے الفاظ زیرلب لائے جائیں اس تمہید ی تقریر کی اگر پہلے سے تیا ری کرلی جائے تو بہت بہتر ہوگا ۔تمہیدی تقریر کے بعد متصلًا اعلان صدارت ہوا کرتاہے ،ہم کئی طریقوں سے اعلان صدارت کرسکتے ہیں ،چند طریقے ملاحظہ فرمائیں :