اسمائے شرطیہ کے تراجم و تراکیب
اسمائے شرطیہ: بمعنیٰ اِنْ، وہ اسما ہیں، جو اِن شرطیہ کی طرح دو جملوں پر داخل ہوتے ہیں، اور فعل مضارع کو جزم دیتے ہیں، ترکیب میں پہلے جملہ کو شرط اور دوسرے جملہ کو جزا کہتے ہیں، جیسے: مَنْ تَضْرِبْ أَضْرِبْ (جس کو تو مارے گا میں ماروں گا)۔
اسمائے شرطیہ کی تعداد
اسمائے شرطیہ نو ہیں:
(۱) مَنْ (جو شخص، جو کوئی) (۲) مَا (جو، جو چیز، جو کچھ) (۳) أَیْنَ (جہاں) (۴) مَتٰی (جب، جس وقت) (۵) أَيُّ (جو، جس، جب، جہاں) (۶) أنٰی (جہاں، جہاں کہیں) (۷) إِذْمَا (اگر، جس وقت) (۸) حَیْثُمَا (جہاں، جہاں کہیں، جس جگہ) (۹) مَھْمَا (جب، جو کچھ، جتنا کچھ، جو کچھ بھی ہو) اور اگر مکان کے لیے ہو، تو ترجمہ ہوگا جہاں۔
ترجمہ کرنے کا طریقہ: یا تو سب سے پہلے ان اسما کا ترجمہ کریں گے، پھر فاعل کا پھر فعل کا، جیسے: مَنْ تَضْرِبْ أَضْرِبْ، (جس کو تو مارے گا، میں ماروں گا) یا سب سے پہلے فاعل کا ترجمہ کریں گے، پھر ان اسما کا پھر آخر میں فعل کا ترجمہ کریں گے، جیسے: مَنْ تَضْرِبْ أَضْرِبْ (تو جس کو مارے گا، میں ماروں گا)۔
ترکیب: مَنْ اسم شرط مفعولِ بہ مقدم، تَضْرِبُ فعل، أنْتَ ضمیر اس میں فاعل تَضْرِبُ فعل اپنے فاعل اور مفعولِ بہ مقدم سے مل کرجملہ فعلیہ خبریہ ہوکر شرط، أَضْرِبُ فعل اپنے فاعل سے مل کر جملہ فعلیہ خبریہ ہوکر جزا، شرط وجزا سے مل کر جملہ شرطیہ جزائیہ ہوا، اسی طرح مَا اور أَيُّ کی ترکیب کریں گے۔
فائدہ: مَنْ، مَا اور أَیُّ کو ترکیب میں کبھی مبتدا بنایا جائے گا، جب کہ اس کے بعد آنے والے جملے میں مبتدا کی طرف لوٹنے والی کوئی ضمیر ہو، جیسے: مَنْ تَضْرِبْہُ أَضْرِبْہُ، ترکیب ہوگی، مَنْ اسم شرط مبتدا، تَضْرِبْہُ أَضْرِبْہُ شرط وجزا سے مل کر جملہ شرطیہ جزائیہ ہوکر خبر، مبتدا خبر سے مل کر جملہ اسمیہ خبریہ ہوا۔