بدل الغلط: ایسا بدل ہے جوغلطی کے بعد اس کی تلافی کے لیے لایا جائے، جیسے: جَائَ نِيْ رَاشِدٌ خَالِدٌ (میرے پاس راشد نہیں؛ بلکہ خالد آیا)۔
نوٹ: بدل الغلط میںمبدل منہ کا ترجمہ کرنے کے بعد لفظِ’ ’نہیں‘‘ لگائیں گے، پھر بدل کا ترجمہ کرنے سے پہلے لفظِ ’’بلکہ‘‘ لگائیں گے، جیسے: جَائَ نِیْ زَیْدٌ بَکْرٌ (میرے پاس زید نہیں؛ بلکہ بکر آیا)۔
{تــمرین ۱۱۶}
مندرجہ ذیل جملوں کا ترجمہ اور ترکیب کریں:
قُطِعَ عَمْرٌو یَدُہٗ، سُرِقَ زَیْدٌ مَالُہٗ، أَعْجَبَنِيْ زَیْدٌ عِلْمُہٗ، رَکِبْتُ الدَّرَّاجَۃَ السَّیَّارَۃَ، قَرَأْتُ الْکِتَابَ إِمْدَادَ النَّحَوِ، اَکَلْتُ لَحْمًا فَاکِھَۃً، أَکْرَمْتُ زَیْدًا مُحَمَّدًا، طَالَعْتُ الْکِتَابَ نِصْفَہٗ، خُذْ دِرْھَمًا دِیْنَارًا، أَعْجَبَنِيْ الطَّالِبُ ذَکَائُ ہُ، أَکَلْتُ السَّمَکَ لَحْمَ الشَّاۃِ، اِشْتَرَیْتُ فَرَساً حِمَاراً۔
عطف بحرف کا ترجمہ اورترکیب
عطفِ بحرف: ایسا تابع ہے جو حرفِ عطف کے بعد ہو اور نسبت میں اپنے متبوع کے ساتھ مقصود ہو، جیسے: جَائَ نِيْ زَیْدٌ وَعَمْرٌو (میرے پاس زید اور عمرو دونوں آئے)۔
ترجمہ کرنے کا طریقہ: پہلے متبوع کا ترجمہ کریں گے، پھر حرف عطف کا پھر تابع کا ترجمہ کریں گے، جیسے: جَائَ زَیْدٌ وَعَمْرٌو (زید اور عمرو دونوں آئے)۔
ترکیب: عطف بحرف میں متبوع کومعطوف علیہ اورتابع کو معطوف کہتے ہیں، جیسے: جَائَ نِيْ فعل بامفعول بہ ،زَیْدٌ معطوف علیہ، وَ حرفِ عطف، عَمْرٌو، معطوف، معطوف علیہ اپنے معطوف سے مل کر جَائَ کا فاعل، جَائَ فعل اپنے فاعل اور مفعول بہ سے مل کر جملہ فعلیہ خبریہ ہوا۔