ترکیب: رُبَّ حرف شبیہ بالزائد، دَرْسٍ طَوِیْلٍ مرکب توصیفی ہو کر لفظاً مجرور اور محلاً مرفوع مبتدا، حَفِظَ فعل، تُ ضمیر فاعل، ہُ ضمیر مفعول بہ، حَفِظَ فعل اپنے فاعل اور مفعول بہ سے مل کر جملہ فعلیہ خبریہ ہو کر خبر، مبتدا اپنی خبر سے مل کر جملہ اسمیہ خبریہ ہوا۔
’’حَاشَا‘‘
استثناء کے لیے : اور اس کا ترجمہ لفظِ سوا ، علاوہ، بجز وغیرہ کے ساتھ ہوتا ہے، جیسے: جَآئَ نِيْ الْقَوْمُ حَاشَا زَیْدٍ (میرے پاس قوم آئی سوائے زید کے)۔
{تــمرین ۷۴}
مندرجہ ذیل جملوں کا ترجمہ کریں:
رُبَّ کَئِیْبٍ لَیْسَ تَنْدیٰ جُفُوْنُہٗ، وَ رُبَّ نَدِیِّ الْجَفْنِ غَیْرُ کَئِیْبٖ، وَاللّٰہِ لَأَشْرَبَنَّ اللَّبَنَ، رُبَّ حَامِلٍ فِقْہٍ غَیْرُ فَقِیْہٍ، رُبَّ أَشْعَثَ مَدْفُوْعٍ بِالْأَبْوَابِ لَوْ أَقْسَمَ عَلیَ اللّٰہِ لَأَبَرَّہُ، رُبَّ رَجُلٍ یَعْمَلُ الْخَیْرَ أَکْرَمْتُہٗ، رُبَّ کَرِیْمٍ جُبَانٌ، رُبَّ زَمِیْلٍ یَتَذَکَّرُ بَعْدَ مَا فَرَغَ، رُبَّ غُلاَمٍ عَلَّمَ الْمَجْدَ نَفْسَہٗ، ذَہَبَ الْقَوْمُ خَلاَ طُلاَّبٍ إِلیٰ دِہْلِيْ، مَا أَکَلْتُ مُذْ أَوْ مُنْذُ الصَّبَاحِ، قَامَ الطُّلاَّبُ حَاشَا زَیْدٍ، رُبَّ دَرْسٍ طَوِیْلٍ حَفِظْتُ، وَاللّٰہِ لَأُکْرِمَنَّکَ، مَارَأَیْتُہٗ مُنْذُ ثَلاَثَۃِ أَیَّامٍ، أَرَئَیْتُمْ مَاأَنْفَقَ مُذْ خَلَقَ السَّمَائَ وَالْأَرْضَ، مَا رَئَیْتُہٗ مُذْ رَجَبَ، جِئْتُ مُذْ دَعَاہُ۔
’’مِنْ‘‘
’’مِنْ‘‘ چند معانی کے لیے استعمال ہوتا ہے؛
ابتداء کے لیے : اور اس کا ترجمہ لفظِ ’’سے‘‘ کے ساتھ ہوتا ہے، جیسے: سِرْتُ مِنْ مَالِیْغَاؤں إِلیٰ دِیْوْبَنْدْ (میں مالی گاؤں سے دیوبند کی جانب چلا)۔
بعضیت کے لیے: اور اس کا ترجمہ لفظ بعض ، کچھ، سے یا چند وغیرہ کے ساتھ ہوتا ہے، جیسے: اَخَذْتُ مِنَ الدَّرَاہِمِ (میں نے بعض درہم لیے)۔