نوٹ : اگر کوئی کلمہ قاعدۂ صرفی کے خلاف ہو ، لیکن استعمال عرب کے موافق ہو تو وہ کلمے غیر فصیح نہیں کہلائیں گے ، جیسے مسجد ، مشرق مغرب وغیرہ ۔
غرابت اور کراہت فی السمع : کلمہ ایسا غیر مانوس الاستعمال ہو کہ کان اس کے سننے سے نفرت کرے ، جیسے خوعم ۔ ( بمعنی احمق )
فصاحت کلام : ( فصاحت مرکب )
فصاحت کلام : کلام تنافر کلمات ، ضعف تالیف ، تعقید لفظی اور معنوی سے محفوظ ہو ۔
تنافر کلمات : کلام میں کچھ ایسے فصیح کلمے جمع ہوجائیں ، یا مکرر آجائیں جس کے سب اس کا تلفظ دشوار ہو جائے ، جیسے
قبر حرب بمکان قفر
ولیس قرب قبر حرب قبر
( ۱ )
ضعف تالیف : کلام مشہور قاعدۂ نحوی کے خلاف ہو ، جیسے جزی بنوہ ابا الغیلان ( اضمار قبل الذکر ہے ) ۔
------------------------------
۱ ؎ قرب اور قبر کی تکرار سے ثقل پیدا ہوگیا ، حرب بن امیہ نے سفر سے لوٹتے ہوئے ایک درخت کو کاٹا ، اس سے آگ ظاہر ہوئی ۔ اس میں جل کرمر گیا ، جناتوں نے اس کے جثے کو بھی غائب کر دیا ۔