(۵ ) شاگردوں سے بھی روایت لے لی اس کو عار نہ سمجھا۔ جیسے امام ترمذی ؒ یہ حضرت امام بخاریؒ کے شاگرد ہیں مگر دوسرے مشائخ سےیہ جو روایات لیکر آئے جو امام بخاریؒ کو نہیں پہنچی تھیں وہ لے لیں۔ چنانچہ امام ترمذیؒ اپنی جامع میں اس کو بطور فخر ذکر فرماتے ہیں : ہذا ما سمع محمد بن اسماعیل منی۔ ( انعام الباری66/1 )
مقاصد اصحابِ صحاح ستہ
(۱ ) امام بخاری احادیث سے مسائل استنباط فرماتے ہیں چنانچہ ایک ہی حدیث سے بے شمار مسائل کا استخراج فرماتے ہیں۔
(۲ ) امام مسلم ؒ احادیث کی تائید میں کثرت سے اسناد لاتے ہیں تاکہ ضعیف حدیث درجۂ حسن ، اور حدیث ِ حسن درجہ صحیح لغیرہ تک پہنچ جائے۔
(۳ ) امام ترمذیؒ بیان مذاہب کے ساتھ انواعِ حدیث بیان فرماتے ہیں۔
(۴ ) امام ابودائود ائمہ مجتہدین کے دلائل جمع فرماتے ہیں۔
(۵ ) امام نسائی ؒ عللِ حدیث بیان فرماتے ہیں۔
(۶ ) امام ابن ماجہ سب احادیث لاتے ہیں حتی کہ ضعیف بھی لاتے ہیں تاکہ ذخیرۂ حدیث سامنے آجائے۔ اور کچھ چھپا نہ رہ جائے۔
فائدہ : حضرات ِ اساتذۂ کرام کے ہاں راجح ترتیب یہ ہے کہ پہلے ترمذی شریف پڑھائی جائے تاکہ مذاہب کا علم ہوجائے پھر ابودائود شریف پڑھائی جائے تاکہ دلائل کا علم ہوجائے پھر بخاری شریف تاکہ طرزِ استنباط کا علم ہوجائے۔ پھر مسلم شریف تاکہ مزید احادیث سے تائید حاصل ہوجائے۔ پھر نسائی شریف تاکہ عللِ احادیث سامنے آجائیں پھر ابنِ ماجہ تاکہ نوادرات کا بھی علم ہوجائے۔ پھر موطا امام مالک ؒ تاکہ آثار سے بھی تائید ہوجائے پھر حنفیہ کیلئے ان سے پہلے موطا امام محمد ؒ اور طحاوی شریف کا پڑھنا بھی ضروری ہے____
بلکہ آثار السنن بھی مستحضر ہونی چاہیے۔ ( اگر ہوسکے تو مستدلات الحنفیہ ( للشیخ الامام عبداللہ بہلویؒ ) جو مختصر ہے کم از کم ایک نظر اسے بھی دیکھ لیاجائے۔ )
اقسامِ محدثین کرامؒ
حضرات ِ محدثینؒ کی پانچ قسمیں ہیں :
۱…طالب : جو حدیث کے حصول میں بالفعل لگاہوا ہو۔
۲… شیخ : استاذ اور محدث کو بھی کہتے ہیں___بعض اہلِ تحقیق کی رائے یہ ہے کہ محدث یاشیخ الحدیث اس وقت تک نہیں ہوسکتا جب تک اس کو بیس ہزار احادیث مع سند ومتن یاد نہ ہوں۔
۳… حافظ : جس کو ایک لاکھ احادیث مع سند والفاظ ِ متن یاد ہوں۔